’’مجھے اشرف غنی پر کچھ زیادہ بھروسہ نہیں تھا اور وہ ‘ سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ بھی اشرف غنی کے خلاف بول پڑے .

امریکہ ( 24 نیوز اردو) سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے بھی اپنے انٹرویو میں سابق اور مفرور افغان سربراہ اشرف غنی کو ’حد درجہ مکار‘ قرار دیتے ہوئے کہا کہ وہ ’قتل کرکے بھاگ گیا۔


( 24 نیوز اردو) کو دیئے گئے خصوصی انٹرویو میں سابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا کہناتھا کہ مذاکرات کے دوران انہوں نے افغان طالبان پر واضح کردیا تھا کہ افغانستان سے امریکی فوجیوں کا اس بات سے مشروط ہوگا کہ وہاں (افغانستان میں) امریکیوں اور اتحادیوں کو کوئی نقصان نہ پہنچایا جائے۔ٹرمپ نے کہا کہ’’اگر (طالبان نے) اگر امریکیوں یا اتحادیوں کو نقصان پہنچایا تو امریکا بھی ان (افغان طالبان رہنماؤں) کے آبائی قصبوں اور ملک کے دوسرے علاقوں پر بمباری کے ساتھ جوابی کارروائی کرے گا،‘‘.

اشرف غنی کے بارے میں بات کرتے ہوئے ان کا کہناتھا کہ میں چاہتا تھا کہ وہ (طالبان) افغان حکومت سے معاہدہ طے کریں۔ اب، سچ کہوں تو، مجھے (اشرف) غنی پر کچھ زیادہ بھروسہ نہیں تھا۔ میں نے کھلم کھلا کہا تھا کہ میرے خیال میں وہ (اشرف غنی) انتہائی مکار ہے۔ وہ (اشرف غنی) سارا وقت ہمارے (امریکی) سینیٹروں کے ساتھ کھانے پینے اور ان کی حمایت حاصل کرنے میں لگا رہتا تھا، ٹرمپ نے اضافہ کیا، سینیٹر اس کی جیب میں تھے اور یہ ہمارے لیے بہت بڑا مسئلہ تھا۔ لیکن میں نے کبھی اسے پسند نہیں کیا… کئی مختلف حوالوں سے وہ قتل کرکے فرار ہوگیا۔ تاہم ڈونلڈ ٹرمپ نے اس بات کی مزید وضاحت نہیں کی۔

ایک تبصرہ شائع کریں

0 تبصرے